پاکستانسٹیصحت

ایمرجنسی سروسز ڈیپارٹمنٹ نے180668 ایمرجنسی متاثرین کو ماہ ستمبرکے دوران ریسکیو کیا

پنجاب میں 35131ٹریفک حادثات میں 287 افرادجاں بحق ہوئے: ڈاکٹر رضوان نصیر

لاہور (خبر نگار)سیکرٹری ایمرجنسی سروس ڈیپارٹمنٹ ڈاکٹر رضوان نصیر نے کہا کہ ایمرجنسی سروس ڈیپارٹمنٹ نے ماہ ستمبر2023کے دوران پنجاب بھر میں بروقت رسپانس کرتے ہوئے 180668ایمرجنسیزکے163610متاثرین کو سروسزفراہم کیں۔انہیں بتایا گیا کہ میں 163610 ایمرجنسیزمیں 35131 روڈ ٹریفک حادثات، 104353میڈیکل ایمرجنسیز،1254آتشزدگی کے واقعات، 3857جرائم کے واقعات،136 ڈوبنے کے واقعات،60عمارتیں گرنے،1121جانوروں کو ریسکیو کرنے اور17698 متفرق آپریشن شامل ہیں۔
انہوں نے ان خیالات کا اظہار گزشتہ روز ایمرجنسی سروس ڈیپارٹمنٹ ہیڈ کوارٹرز میں منعقدہ ماہانہ جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا جس میں ایمرجنسی سروسز ہیڈ کوارٹرز اور ایمرجنسی سروسز اکیڈمی کے تمام ونگز کے سربراہان شریک تھے۔اس موقع پر صوبائی مانیٹرنگ سیل کے سربراہ نے سیکرٹری ایمرجنسی سروس ڈیپارٹمنٹ ڈاکٹر رضوان نصیرکو ماہانہ ایمرجنسی کے اعدادوشمار سے آگاہ کیا۔ انہیں بتایا گیا کہ گزشتہ ماہ کے دوران پنجاب میں 35131 روڈ ٹریفک حادثات پیش آئے جن میں 287 افراد جاں بحق ہوئے۔ ان ٹریفک حادثات میں سے زیادہ تر ٹریفک حادثات 8272 لاہور میں ہوئے جن میں 31 افراد ہلاک ہوئے۔ اسی طرح فیصل آباد میں 2422،ملتان میں 2384، گوجرانوالہ میں 2000،رالپنڈی میں 1472،شیخوپورہ میں 1317 جبکہ باقی 30اضلاع میں 17264 روڈ ٹریفک حادثات پیش آئے۔اسی طرح آگ کے زیادہ تر واقعات بڑے اضلاع میں ہوئے جن میں لاہور میں 368،فیصل آباد میں 122،راولپنڈی میں 77،ملتان میں 69،گوجرانوالہ میں 61 اورشیخوپورہ میں 42 رپورٹ ہوئے۔
سیکرٹری ایمرجنسی سروسز کو یہ بھی بتایا گیا کہ پنجاب میں نہروں، ندی نالوں اور جوہڑوں سمیت مختلف مقامات پر ڈوبنے کے 136 واقعات میں 111 افراد جاں بحق ہوئے۔ ڈوبنے کے کل حادثات میں سے 75 نہروں، 35دریاؤں،18 ندی نالوں اور 08 سیوریج ڈرین وغیرہ میں پیش آئے۔ 54افراد نہروں میں، 25دریاؤں،14 ندی نالوں میں، 07 سیوریج نالوں میں ڈوب کر جان کی بازی ہار گئے۔
سیکرٹری ایمرجنسی سروسز ڈپارٹمنٹ ڈاکٹر رضوان نصیر نے پنجاب بھرمیں روڈ ٹریفک حادثات اور ڈوبنے کے واقعات میں 398جانوں کے المناک نقصان پر گہری تشویش کا اظہار کیا۔جن میں 111ڈوبنے سے جان بحق ہوئے جبکہ روڑ ٹریفک حادثات میں 287افرادجان کی بازی ہار گئے۔ انہوں نے شہریوں سے اپیل کی کہ وہ ٹریفک قوانین پر سختی سے عمل کریں بالخصوص موٹر سائیکل سوار انتہائی بائیں لین موٹر سائیکل چلائیں اور اپنی حد رفتار 50کلومیٹر فی گھنٹہ سے تجاوز نہ کریں تاکہحادثات میں کمی لائی جا سکے۔ انہوں نے اس بات پر پر زور دیا کہ شہری نہروں، ندیوں اور دیگر تفریحی مقامات پر نہاتے ہوئے حفاظتی پروٹوکول کی پابندی کریں تاکہ مزید حادثات سے بچا جا سکے۔ ڈاکٹر رضوان نصیر کا کہنا تھا کہ سیفٹی اقدامات پر عمل پیرا ہو کر دونوں طرح کے واقعات نمایاں کمی لائی جا سکتی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Related Articles

Back to top button