جرم و سزاسٹی

شہریوں کی جان و مال اور عزت و آبرو کے لئے فرائض انجام دینے والے پولیس ملازمین کے محکمانہ مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے جارہے ہیں

لاہور(خبر نگار)
سربراہ لاہور پولیس ایڈیشنل آئی جی بلال صدیق کمیانہ نے کہا ہے کہ شہریوں کی جان و مال اور عزت و آبرو کے لئے فرائض انجام دینے والے پولیس ملازمین کے محکمانہ مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے جارہے ہیں۔ذاتی شنوائی کا مقصد پولیس ملازمین کے معاملات میں سفارش کلچر کی حوصلہ شکنی ہےتاہم اختیارات سے تجاوز، مجرمانہ سرگرمیوں، ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی میں ملوث عناصر کسی رعائیت کے مستحق نہیں۔سی سی پی او لاہور بلال صدیق کمیانہ کی زیر صدارت اردل روم میں پولیس ملازمین کی اپیلوں کی شنوائی باقاعدگی سے جاری ہے۔بلال صدیق کمیانہ نے گزشتہ اڑھائی ماہ کے دوران ایک ہزار سات سو پندرہ پولیس ملازمین کی اپیلیں خود سنیں۔انہوں نے معمولی کوتاہی پر سزا یافتہ ایک ہزار چار سو بتیس ملازمین کی سزائیں معاف کر دیں جبکہ 118 ملازمین کو ملازمت پر فوری بحال کر دیا۔سی سی پی او بلال صدیق کمیانہ نے الزامات درست ثابت ہونے پر سزا یافتہ 106 ملازمین کی اپیلیں مسترد کر دیں۔اسی طرح سی سی پی او بلال صدیق کمیانہ کے روبرو 36 سے زائد ایگزیگٹو کیڈر پولیس ملازمین کی بھی شنوائی ہوئی۔دوران شنوائی 02 افسران کے شوکاز نوٹسز پر انہیں آئندہ محتاط رہنے کے احکامات جاری کئے گئے۔ایگزیکٹو کیڈر کے 18 پولیس ملازمین کے شوکاز تسلی بخش جوابات پرداخل دفتر کر دیئے گئے جبکہ قصور وار ثابت ہونے پر 06 ملازمین کو مختلف سزائیں دی گئیں۔سی سی پی او بلال صدیق کمیانہ نے ایگزیکٹو کیڈر کے 10 معطل شدہ افسران کو ملازمت پر بحال کر دیا۔سربراہ لاہور پولیس بلال صدیق کمیانہ نے کہا ہے کہ اپیلوں کی شنوائی کا مقصد پولیس افسران و اہلکاروں کے مسائل بروقت حل کرنا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ سزا و جزا کا تعین ذاتی پسند ناپسند کی بجائے قواعد و ضوابط کے مطابق کیا جا رہا ہے۔غیر ارادی و انسانی بنیادوں پر ہونے والی غلطی یا کوتاہی پر سزا میں نرمی پر غور کیا جا سکتا ہے۔پولیس ملازمین اپیلوں، ٹرانسفر پوسٹنگ کیلئےسفارشیں کروانے کی بجائے اردل روم میں اپنے مسائل سامنے لائیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Related Articles

Back to top button